انوکھا اندازِ محبت ۔۔۔۔

0
392

انوکھا اندازِ محبت ۔۔۔۔

آرام دہ بسترپہ دھنسی
اُسکے گھر سے زرا دیر پہلے جانے سے پہلے
لتا کا مدھر گیت “ اب تو ھے تم سے۔۔۔۔ ھر خوشی اپنی
سنتے ھوئے
سازوں میں محو
اپنی آواز ملا کر اُسکی آواز کو چھوتے ھوئے
بے خبر ادھر اُدھر سے
اُفففففف ۔۔۔۔۔۔ اچانک ۔۔۔۔۔ میرے فہم میں بلا وجہ
بےوقت ۔۔۔۔ سیل میرا ۔۔۔۔ انکمنگ کال سے تھرکنے لگا
ھمممممم ۔۔۔ کہاں ھو ۔۔۔۔؟
کیا اداء ھے
گویا کھل گئی زلفیں سیاہ
صباء ۔۔۔۔۔۔ اٹھکیلیاں تُم سی
وہ تڑپتا ھوا ھم نفس میرا
موسم کی کہانی بُن رھا تھا ۔۔۔۔
اک روانی بس ۔۔۔۔۔ ایک رُو مین بہہ رھا تھا
تُم زرا سنبھال کر رکھنا ۔۔۔۔۔۔
برستی بوندوں میں پنہاں ۔۔۔۔
اپنے دفتر کی فائلوں میں ۔۔۔۔ میں غرق
آفس کےشیشوں سے گاھے بگاھے بوندوں کو تھرکتا دیکھتا ھوا
اپنی ذات پہ مسلط ۔۔۔۔ تیرا خمار سوچتا ھوا
بھیج رھا ھوں لمس اپنے
تُم مگر ۔۔۔۔ قیدءمحفل سے عاری ھو
تنء تنہا ھو
موسم کو انجوائے کرنا
بند دریچوں سے ۔۔۔۔۔ کیا تکنا
موسم کی دعوت پہ ۔۔۔۔۔ لجّا کیا کرنا
مجاز مثل ھمدم ۔۔۔۔ تیری جان ء نفس بانہیں پھیلائے ھوئے
دلنشیں موسم ۔۔۔۔ پُکارتا ھے تجھے
کھول دو در ۔۔۔۔ و ۔۔۔۔ دریچے
بوندوں میں ۔۔۔۔۔ کھل جاؤ
فضاء میں ھاتھ ھلا دو
بوندوں میں مل جاؤ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here