Guzra Hua Zamana Urdu Hindi Ghazal

0
516

Guzra Hua Zamana – گزرا ہوا زمانہ

غزل

دیکھا اسے اک نظر جان گیا میں
گزرہ ہوا زمانہ وآپس نہیں آتا

اس کے چہرے پے جھلکتی تھی ہنسی
وہ آنکھیں بھی بالکل مجھ ہی سے ملتی تھی

بارش کی پانی جیسی تھی اس کی باتیں
جیسے شفاف بوندھ ہوا کرتی ہیں

اس کا مڑ مڑ کے دیکھنا مجھے کرتا تھا پاگل
اس کا چلنا مجھے حوصلہ دیتا تھا

آج وہ نہیں ہے تو معلوم ہوتا ہے
گزارہ ہوا زمانہ وآپس نہیں آتا

ازقلم: تابندہ جبیں

 

Ghazal

Dekha isay ik nazar jaan gaya main
Guzara hua zamana wapis nahi aata

Is k chehry pe chalkti thi hansi 
woh ankhain bhi bilkul mujh se he milti thi 

Barish k pani jaisi thi is ki baten 
jaisy shifaaf boondh hua karti hai

is ka mur mur kar dekhna mujhe karta tha pagal 
is ka chalna mujhe hosla deta tha 

aaj woh nahi hai to maloom hota hai 
Guzra hua zamana wapis nahi aata 

Tabinda Jabeen

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here