Mukafaat-e-Amal

0
362

Mukaafaat-e-Amal Beautiful Article by Bint-e-Akhlaaq

مکافات عمل

کتنا خوبصورت اور تسکین بخش لفظ ہے مکافات عمل. کیا اور بھی کوئی ہے جسے اس لفظ کو سنتے ہی سکون اور اطمینان کا احساس ہوتا ہے؟ کیا اس لفظ کے سماعت سے ٹکرانے پر اللہ تعالیٰ کی رحمت اور قربت پر یقین اور مضبوط نہیں ہو جاتا؟

کیا انسان کو اپنی تکلیف کے کم ہونے کا احساس نہیں ہوتا؟ کیا انسان کی اللہ سے محبت بڑھنے کا سامان ہوتا محسوس نہیں ہوتا؟
جب جب الفاظ کے نشتروں کو ان لوگوں پر برق رفتاری سے برستا دیکھتی ہوں، جن لوگوں کے الفاظ میری روح کو چھلنی کر گئے تب تب میرا مکافات عمل پر یقین بڑھ جاتا ہے.

جب جب ان ہاتھوں کو اسی خنجر سے چوٹ پہنچتے دیکھتی ہوں، جو میری ذات کو قتل کرنے کے کام آیا تھا، تب تب اپنے رب کی قربت کا احساس میرئ مردہ ذات کو زندگی بخش دیتا ہے.

جب جب میری آنکھوں میں آنسو لانے والے کو چیخ چیخ کر روتا دیکھتی ہوں تو اس لفظ کی خوبصورتی کو اور نکھرتا پاتی ہوں.
جب جب میرا چین چھیننے والوں کو سکون کی تلاش میں بھٹکتا دیکھتی ہوں تو دل سکون سے بھر جاتا ہے.
جب جب میری قوت گویائی کو گونگا اور قوت سماعت کو بہرا کرنے والوں کو کسی داد رسائی کرنے والے کی تلاش کرتا دیکھتی ہوں تو اپنے رب کی رحمت پر ایمان اور گہرا ہوتا جاتا ہے.

جب جب بے انصافوں کو انصاف کا دکھڑا روتے دیکھتی ہوں تب تب اپنے رب کے انصاف پر یقین کامل ہو جاتا ہے.
اور جب جب گناہگار کو یہ کہتے سنتی ہوں کہ آخر ہم نے کسی کے ساتھ کیا برا کیا جو ہمارے ساتھ برا ہوا تب تب اپنے رب کے الفاظ دل کی گہرائی میں اتر جاتے ہیں کہ

وَ لَا یَظۡلِمُ  رَبُّکَ  اَحَدًا
اور تیرا رب کسی پر ظلم و ستم نہ کرے گا

از قلم: بنت اخلاق

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here