Sar Jhukao ge to Pathar deewata ho jay ga

0
248

Sar Jhukao ge to Pathar deewata ho jay ga urdu / Hindi  sad Ghazal

غزل

سر جھکاؤ گے تو پتھر دیوتا ہو جائے گا 
اتنا مت چاہو اسے وہ بے وفا ہو جائے گا

ہم بھی دریا ہیں ہمیں اپنا ہنر معلوم ہے 
جس طرف بھی چل پڑیں گے راستہ ہو جائے گا

کتنی سچائی سے مجھ سے زندگی نے کہہ دیا 
تو نہیں میرا تو کوئی دوسرا ہو جائے گا

میں خدا کا نام لے کر پی رہا ہوں دوستو 
زہر بھی اس میں اگر ہوگا دوا ہو جائے گا

سب اسی کے ہیں ہوا خوشبو زمین و آسماں 
میں جہاں بھی جاؤں گا اس کو پتہ ہو جائے گا

Ghazal

Sar Jhukao ge to pathar deewat ho jay ga
Itna mat chaho k who bewafa ho jay ga

Hum bhi darya hain humain apna hunar maloom hai
Jis taraf bhi chal paren gy rasta ho jay ga

Kitni sachai se mujh se zindgi ne keh diya
Tu Nahi mera to koi dosra ho jay ga

Mein Khuda ka naam ly kr pee rha hoon dostoo
Zahar bhi is main agar ho ga tu dawa ho jay ga

Sab isi ky hain hawa Khushbu zameen o Asmaan
Mein Jahan bhi jaon ga is ko pata ho jay ga

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here