Jo Khayaal thay na qayas thay wohi log humse bichar gaye

0
80

جو خیال تھے نہ قیاس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے
مری زندگی کی جو آس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے

جنہیں مانتا نہیں یہ دل وہی لوگ ہیں مرے ہمسفر
مجھے ہر طرح سے جو راس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے

مجھے لمحہ بھر کی رفاقتوں کے عذاب  اور ستائیں گے
مری عمر بھر کی جو پیاس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے

یہ خیال سارے ہیں عارضی یہ گلاب سارے ہیں کاغذی
گلِ آرزو کی جو باس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے

جنہیں کر سکا نہ قبول میں وہ شریکِ راہِ سفر ہوئے
جو مری طلب مری آس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے

یہ جو رات دن مرے ساتھ ہیں ہی اجنبی کے ہیں اجنبی
وہ جو دھڑکنوں کی اساس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے

Ghazal

Jo Khayaal thay na qayas thay wohi Log hum se bichar gaye
meri Zindgi ki jo aas thay wohi log hum se bichar gaye

Jinhein manta nahin yeh dil wohi log hein mere humsafar
Mujhe Har Tarah se jo raas thay wohi log hum se bichar gaye

Mujhe Lehma bhar ki rafaqtoon k azab aur sataen ge
Meri Umer bhar ki jo payas thay wohi log humse bichar gaye

Yek khayaal sary hein aarzi yeh ghulaab sary hein kaghzi
Gul-e-Aarzoo ki jo baas thay wohi log hum se bichar gaye

Jinhen kar saka na qabool mein woh Shareek-e- Raah-e- safar huey
Jo meri talab meri aas thay wohi log humse bichar gaye

Yeh jo raat din mere sath hein wohi ajnabi k hein ajnabi
Woh jo dharknoon ki asaas thay wohi log humse bichar gaye

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here